شعر کہانی

بات ہے جمنا کے کنارے بسی ہوئی اس دلیّ کی جس کی آغوش میں ابھی مرزا اسداللہ خاں غالب کی سانسیں لہر لے رہی ہیں غالب نفس کوچے شعر و سخن کی فضا میں اپنے پیچ و خم طے کر رہے ہیں پر کشش ہویلیوں کے دریچوں پر ٹھہری ہوئی ہوائیں شمعِ محفل کو داد… continue reading