poetry, shatari, sher, urdu, blog

شعر کہانی

پھرتے ہیں میرؔ خوار کوئی پوچھتا نہیں

دلی کا باغ جب نذرِ خزاں ہو چکا جب یہ اپنی خوش نما بہاروں سے ہاتھ دھو چکا تو اس باغ کے اکثر پرندے ہجرت پر مجبور ہوئے اور گلستانِ لکھنؤ میں اپنے آشیانے کے لئے شاخیں ڈھوندتے رہے میرؔ کی دربدری ٹھکانا چاہتی تھی پھرتے ہیں میرؔ خوار کوئی پوچھتا نہیں یہ زمانہ نواب… continue reading

Saqi and Alvi

We lived together till death did us apart

Two major voices of modern Urdu poetry would never be heard again.

Yusufi: The Master of Humour & Satire

“Koi umr puchhta hai toh phone number dekar baton mein laga leta hu”